پنجاب اسمبلی کے اجلاس کیلئے گھنٹیاں بجنا شروع

پنجاب اسمبلی(Punjab Assembly session) میں اجلاس کے لیے گھنٹیاں بجنا شروع ہو گئیں، اجلاس میں شرکت کے لیے ارکانِ اسمبلی کی آمد کا سلسلہ جاری ہے۔اسپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان، پی ٹی آئی رہنما فیاض الحسن چوہان، مسلم لیگ ن کے وفاقی وزیر و رہنما سعد رفیق، خواجہ آصف، اعظم نذیر تارڑ، رانا مشہود، عظمیٰ بخاری، پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر حسن مرتضیٰ اور دیگر پنجاب اسمبلی پہنچ گئے۔

گورنر نے وزیرِ اعلیٰ کو اعتماد کے ووٹ کیلئے کہا ہے: سعد رفیق
وفاقی وزیرِ ریلوے خواجہ سعد رفیق نے پنجاب اسمبلی کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ آئین گورنر کو واضح اختیار دیتا ہے کہ وہ وزیرِ اعلیٰ کو اعتماد کے ووٹ کے لیے کہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ گورنر نے وزیرِ اعلیٰ کو اعتماد کا ووٹ لینے کے لیے کہا ہے، اعتماد کے ووٹ کے معاملے پر وزیرِ اعلیٰ نے وہی کیا جو عمران خان کے معاملے پر ڈپٹی اسپیکر نے کیا تھا۔

خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ ہماری اطلاعات کے مطابق اس وقت وزیرِ اعلیٰ کے پاس ووٹ پورے نہیں، ہم اعتماد کے ووٹ کے عمل کی مانیٹرنگ کریں گے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ دیکھیں گے کہ یہ اعتماد کے ووٹ کے دوران ہیرا پھیری نہ کریں، ہم پنجاب اسمبلی میں سب سے بڑی جماعت ہیں۔

وفاقی وزراء کے آنے پر پابندی نہیں: اسپیکر پنجاب اسمبلی
اسپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ عدالت نے وزیرِ اعلیٰ کو اعتماد کے ووٹ کے لیے پابند نہیں کیا۔

ان کا کہنا ہے کہ حکومت کی مرضی ہے کہ جب بھی اعتماد کا ووٹ لے، وفاقی وزراء کے اسمبلی آنے پر کوئی پابندی نہیں۔

اسپیکر پنجاب اسمبلی(Punjab Assembly session) سبطین خان نے یہ بھی کہا کہ ایوان کا اعتماد ہو گا تو ہی حکومت میں ہوں گے، اگر ہمیں اعتماد کا ووٹ نہ ملا تو اپوزیشن میں بیٹھیں گے۔

پرویز الہٰی اسمبلی کی تحلیل نہیں چاہتے: حسن مرتضیٰ
پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر حسن مرتضیٰ نے پنجاب اسمبلی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ پرویز الہٰی نہیں چاہتے کہ اسمبلی تحلیل ہو۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ عمران خان اسمبلی تحلیل کرنا چاہتے ہیں، وزیرِ اعلیٰ کے اعتماد کے ووٹ کے معاملے پر واضح اختلاف موجود ہے۔

حسن مرتضیٰ کا یہ بھی کہنا ہے کہ عمران خان سے اختلاف کی بنیاد پر پرویز الہٰی اعتماد کا ووٹ نہیں لے رہے۔

مزیدخبروں کے لیے ہماری ویب سائٹ ہم مارخور وزٹ کریں۔