ممنوعہ فنڈنگ فارن ایکسچینج ایکٹ کیس: عمران خان کی عبوری ضمانت میں توسیع

Breaking News: بینکنگ کورٹ نے ممنوعہ فنڈنگ فارن ایکسچینج ایکٹ کے کیس میں چیئرمین پی ٹی آئی، سابق وزیرِ اعظم عمران خان کی عبوری ضمانت میں توسیع کر دی۔بینکنگ کورٹ کی جج رخشندہ شاہین نے ممنوعہ فنڈنگ فارن ایکسچینج ایکٹ کے کیس میں سابق وزیرِ اعظم عمران خان اور ان کے شریک ملزمان کی عبوری ضمانتوں پر سماعت کی۔

شریک ملزمان میں یونس علی رضا، سردار اظہر طارق، طارق شفیع، فیصل مقبول شامل ہیں۔

معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ملزم یونس علی رضا اور سردار رضا طارق حاضر ہیں، سینئر وکیل شاہ خاور سپریم کورٹ میں ہیں۔

جج نے استفسار کیا کہ کیا شاہ خاور آئیں گے، بحث کریں گے، مقدمے میں ضمانتیں کتنی ہیں؟

معاون وکیل نے جواب دیا کہ اس مقدمے میں 4 ضمانتیں ہیں۔

اس دوران ملزم طارق شفیع بھی وکیل کے ہمراہ عدالت میں پیش ہو گئے۔

ملزم فیصل مقبول کی جانب سے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دائر کر دی گئی اور ان کے وکیل راجہ عبدالقدیر نے عدالت کو بتایا کہ فیصل مقبول دل کے مریض ہیں، ڈاکٹرز نے انہیں سفر کرنے سے منع کیا ہے۔

معاون وکیل نے عدالت کو بتایا کہ اسپیشل پراسیکیوٹر راجہ رضوان عباسی راستے میں ہیں، آ رہے ہیں۔

عدالت نے کیس کی سماعت میں وقفہ کر دیا اور اسپیشل پراسیکیوٹر راجہ رضوان عباسی کے عدالت میں پیش ہونے پر سماعت دوبارہ شروع کی۔

پراسیکیوٹر راجہ رضوان عباسی نے عدالت کو بتایا کہ عمران خان نے حفاظتی ضمانت ہائی کورٹ سےحاصل کی۔

عمران خان کے وکیل انتظار پنجوتھا نے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست عدالت میں دائر کر دی اور دلائل دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان لاہور میں لانگ مارچ کی قیادت کر رہے ہیں، کیس کا پہلے حدود کا ایشو تھا، ہائی کورٹ نے حدود کا تنازع حل کیا، عمران خان سیاسی پارٹی کے قائد ہیں، لانگ مارچ کی سربراہی کر رہے ہیں، ہماری درخواست آج کی حد تک ہے، ویسے عمران خان ہر جگہ پیش ہوتے ہیں۔

پراسیکیوٹر نے استدعا کی کہ عمران خان کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست مسترد کی جائے، یہ تو کوئی جواز نہ ہوا کہ عمران خان لانگ مارچ کر رہے ہیں پیش نہیں ہو سکتے۔

عدالت نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست منظور کرتے ہوئے ان کی عبوری ضمانت میں 10 نومبر تک توسیع کر دی۔

FIA نے عمران خان اور دیگر کیخلاف مقدمہ درج کیا
واضح رہے کہ وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف آئی اے نے پاکستان تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا۔

ایف آئی آر میں سردار اظہر طارق، سیف اللّٰہ نیازی، سید یونس، عامر کیانی، طارق شیخ، طارق شفیع سمیت 10 افراد کو بھی نامزد کیا گیا۔

فارن ایکسچینج ایکٹ کی خلاف ورزی پر کارپوریٹ بینکنگ سرکل نے ایف آئی اے میں مقدمہ درج کرایا، ملزمان میں ایک نجی بینک کا منیجر بھی شامل ہے۔

ایف آئی آر کے مطابق ملزمان نے فارن ایکسچینج ایکٹ کی خلاف ورزی کی، ملزم نجی بینک اکاؤنٹ کے بینیفشری ہیں۔

ایف آئی اے کی جانب سے درج ایف آئی آر میں فیصل مقبول شیخ، حامد زمان اور منظور احمد چوہدری کا نام بھی شامل ہے۔

ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ تحریکِ انصاف کا نجی بینک میں اکاؤنٹ تھا اور نجی بینک کے منیجر کو بھی مقدمے میں شامل کیا گیا ہے۔
مزیدخبروں کے لیے ہماری ویب سائٹ ہمارخور وزٹ کریں۔