پرویز الہٰی نے پنجاب اسمبلی سے اعتماد کا ووٹ حاصل کرلیا

پرویز الہیٰ(Pervaiz Elahi) نے پنجاب اسمبلی سے 186 ووٹ لے کر اعتماد کا ووٹ حاصل کرلیا ہے، ووٹنگ کے موقع پر اپوزیشن اراکین نے کارروائی کا بائیکاٹ کیا۔چوہدری پرویز الہٰی نے اس موقع پر کہا کہ میں تحریک انصاف اور ق لیگ کے لوگوں کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

پرویز الہٰی کا کہنا تھا کہ آج ن لیگ کو صحیح طور پر سرپرائز ملا ہے ان کو اندازہ نہیں تھا آج کیا ہونا ہے، ایک ہی لیڈر ہے وہ عمران خان ہے، تمام وزرا کا شکریہ۔
انہوں نے کہا کہ لیگل ٹیم نے محنت کی عدالت میں ثابت کیا کہ گورنر کا آرڈر غیر قانونی ہے۔

پرویز الہٰی (Pervaiz Elahi)نے کہا کہ اللّٰہ نے کرم کیا اور 186 ووٹ سامنے آئے ہیں، یہ بارات لے کر آئے تھے ان کی ڈولی اور جھولی خالی ہو گئی۔

انہوں نے مزید کہا کہ شریف آدمی گورنر کی عزت خاک میں ملا دی، ن لیگ کی اپنی تو عزت ہی نہیں، دلیر بنو شکست تسلیم کرو۔

شریف آدمی گورنر کی عزت خاک میں ملا دی

وزیراعلیٰ نے کہا کہ عمران خان کے ویژن کے ساتھ ہیں، ہم نے چوروں کو گھر کے اندر تک محدود کرنا ہے، پاکستان تحریک انصاف اور ق لیگ کے لوگوں کا شکریہ ادا کرتا ہوں، مجلس وحدت المسلمین اور بلال وڑائچ کا شکریہ بھی ادا کرتا ہوں۔

پرویز الہٰی(Pervaiz Elahi) نے کہا کہ ن لیگ والوں نے ایک ماہ سے شور کیا ہوا تھا۔

قبل ازیں اسپیکر نے پرویز الہٰی کے 186 ووٹ لینے کا اعلان کیا، نتائج کی کاپی گورنر پنجاب اور لاہور ہائیکورٹ میں جمع کرائیں گے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے اعتماد کے ووٹ پر رائے شماری کیلئے راتوں رات کارروائی شروع کی، پنجاب اسمبلی میں وزیراعلیٰ پر اعتماد کے ووٹ کی قرارداد پیش کی گئی۔

راجہ بشارت اور اسلم اقبال نے اعتماد کے ووٹ کی قرارداد پیش کی، اس موقع پر پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن و حکومتی اراکین کی جانب سے شور شرابہ جاری رہا جبکہ کرسیاں بھی چل گئیں تاہم اس صورتحال میں بھی رائے شماری جاری رہی۔

اپوزیشن کی جانب سے پنجاب اسمبلی کے اجلاس کا بائیکاٹ کیا گیا ہے، اپوزیشن اراکین نے ڈاکو، ڈاکو کے نعرے لگائے، قرارداد کی کاپیاں ہوا میں اچھال دیں اور ایوان سے باہر چلے گئے۔

اسمبلی کارروائی کا پس منظر
اس سے کچھ دیر قبل وقفے کے بعد پنجاب اسمبلی کا اجلاس دوبارہ شروع ہوا۔ پچھلا اجلاس ملتوی کرکے آج یعنی 12جنوری کی تاریخ کو نیا اجلاس طلب کیا گیا تھا۔

وزیر اعلیٰ چوہدری پرویز الہٰی گھنٹوں انتظار کرنے کے بعد پنجاب اسمبلی پہنچے تھے، فواد چوہدری نے کہا کہ 187 ارکان کا ہدف پورا کرلیا ہے، مزید کچھ ارکان اجلاس میں شرکت کیلئے روانہ ہوگئے ہیں۔

پنجاب اسمبلی کے اپوزیشن ارکان کا کہنا ہے کہ اسمبلی میں پرویز الہٰی کو اکثریت حاصل نہیں رہی ، ایوان کے حاضری رجسٹر کے مطابق پی ٹی آئی اور ق لیگ کے 181 ارکان نے حاضری درج کرائی۔

اسپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے اپوزیشن اراکین کی ہلڑ بازی کو روکنے میں ناکامی کے بعد ایوان میں سیکیورٹی طلب کرلی، پنجاب اسمبلی اجلاس میں اعتماد کا ووٹ لینے کی تیاریاں مکمل کرلی گئیں۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس اب سے کچھ دیربعد دوبارہ شروع ہوگا، پرویز الہٰی اسمبلی کے پچھلے دروازے سے پنجاب اسمبلی میں داخل ہوئے، اجلاس شروع ہونے کے فوری بعد اعتماد کا ووٹ لیے جانے کا امکان ہے، وزیراعلی پرویز الہٰی نے ارکان اسمبلی سے ملاقات بھی کی۔


ڈپٹی اسپیکر واثق قیوم نے دعویٰ کیا ہے کہ حکومت نے اپنے نمبر پورے کرکے دکھا دیے ہیں۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس اسپیکر سبطین خان کی صدارت میں تقریباً دو گھنٹے کی تاخیر سے شروع ہوا، اسپیکر پنجاب اسمبلی نے اجلاس کے وقت میں ایک گھنٹے کا اضافہ کر دیا تھا۔

اجلاس میں اپوزیشن اراکین نے احتجاج کرتے ہوئے اسپیکر ڈائس کا گھیراؤ کیا، لیگی رکن اسمبلی میاں عبدالرؤف نے غیر متعلقہ افراد کو دھکے مار کر ایوان سے نکال دیا۔

دو ارکان کے پہنچنے سے ممبران کی تعداد 187 ہوجائے گی، فواد چوہدری

فواد چوہدری نے کہا کہ بہاولپور سے ایک اور رکن اسمبلی نکلے ہوئے ہیں ان کا بھی انتظار کر رہے ہیں، دونوں ارکان اسمبلی کے پہنچنے سے تعداد 187 ہوجائے گی۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ 187 ارکان اسمبلی کی تعداد 45 منٹ میں پوری ہوجائے گی، دونوں ارکان جیسے ہی پہنچ جائیں گے تو پرویز الہٰی Pervaiz Elahi)کو اعتماد کا ووٹ دے دیں گے، اعتماد کا ووٹ خفیہ نہیں اوپن ہوتا ہے، عدالت کا حکم ہے کسی بھی وقت اعتماد کا ووٹ لیا جا سکتا ہے، اس وقت ہمارے نمبرز پورے ہیں۔

مزیدخبروں کے لیے ہماری ویب سائٹ ہم مارخور وزٹ کریں۔