مارگلہ ہلز آتشزدگی کیس: ٹک ٹاکر ڈولی عینی شاہد کی گواہی سُن کر رو پڑی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) مارگلہ ہلز(Margala Hills) آتشزدگی کیس میں ٹک ٹاکر نوشین سعید عرف ڈولی نے اپنی بےگناہی ثابت کرنے کے لیے ایک اور گواہ کی ویڈیو جاری کردی۔

ٹک ٹاکر ڈولی (Tik toker Dolly) نے اپنے انسٹاگرام (Instagram) اکاؤنٹ پر نئی ویڈیو شیئر کی ہے جس میں وہ اُسی مقام پر موجود ہیں جہاں جنگل میں آگ لگائی گئی تھی۔
ویڈیو میں ڈولی کے ساتھ موجود اُس علاقے کا بزرگ شہری بتاتا ہے کہ ’جھاڑیوں میں آگ سانپوں کو مارنے کے لیے لگائی گئی تھی۔‘

بزرگ شہری نے بتایا کہ ’ڈولی نے آگ نہیں لگائی بلکہ آگ پہلے سے لگی ہوئی تھی، ٹک ٹاکر آئیں، گاڑی سے اُتریں اور جہاں آگ لگی تھی وہاں اپنی ویڈیوز بنوائیں۔‘

دوسری جانب شہری کی گواہی سُن کر ٹک ٹاکر ڈولی آبدیدہ ہوگئیں۔

انسٹاگرام پر ویڈیو شیئر کرتے ہوئے ڈولی نے کیپشن میں لکھا کہ ’سب جانتے ہیں کہ میں نے آگ نہیں لگائی اور نہ ہی میں اپنے سیلون سے کوہسار گئی، میرے پاس اب بھی بہت سے ثبوت ہیں۔‘

ڈولی نے شدید غصے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ’آگ اُن بےحس اور مطلبی لوگوں نے لگائی جو دوسروں کا تماشہ بناکر خوش ہوتے ہیں۔‘

ٹک ٹاکر نے کہا کہ ’مجھے رونا، اس شخص کی انسانیت اور سچائی دیکھ کر آیا، جس سے میرا کوئی رشتہ نہیں، اُس نے میرے لیے سچ بولا اور میں اتنے دن تک اپنا وقت مطلبی لوگوں پر ضائع کرتی رہی۔‘

اُنہوں نے کہا کہ ’یہ آگ بہت سے مطلبی لوگوں کو بےنقاب کرگئی ہے۔‘

ڈولی نے مزید کہا کہ ’میں ردعمل سے نہیں ڈرتی لیکن میں اس بات سے ڈرتی ہوں کہ ہم ایک کمیونٹی کے طور پر کہاں جا رہے ہیں۔‘

واضح رہے کہ مارگلہ ہلز آتشزدگی کیس میں ٹک ٹاکر نوشین سعید عرف ڈولی کی 27 مئی تک عبوری ضمانت منظور کی گئی ہے۔

ایڈیشنل سیشن جج نے ملزمہ کو 1 لاکھ روپے کے مچلکے جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔