لندن میں بیٹھا چوروں کا ٹولہ سن لے ملکی مستقبل کے فیصلے عوام کرینگے: عمران خان

اسلام آباد(ویب ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ لندن میں بیٹھا چوروں کا ٹولہ سن لے ملکی مستقبل کے فیصلے تم نہیں عوام کریں گے، حقیقی آزادی کا وقت آگیا، سیاست نہیں کر رہا، انقلاب کیلئے اسلام آباد بلا رہا ہوں، قوم بھرپور ساتھ دے، جو سازش روک سکتے تھے ان کو بتایا تھا معاشی بحالی دم توڑ جائے گی، افسوس پھر بھی کچھ نہیں کیا گیا۔

مردان جلسے سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ شاندار استقبال پر دل سے شکر گزار ہوں، مردان آنے کا ایک مقصد ہے، آپ سب کو اسلام آباد جانے کے لیے تیار کر رہا ہوں، جب کال دوں تو آپ نے میرے ساتھ اسلام آباد جانا ہے، اسلام آباد سیاست کے لیے نہیں ایک انقلاب کے لیے بلا رہا ہوں، پاکستان کو حقیقی آزادی دلانے کی جدوجہد میں شرکت کرنا ہوگی۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ ہم نے اپنی ایکسپورٹ میں تاریخی اضافہ کیا، ہم نے ریکارڈ ٹیکس اکٹھا کیا، عالمی سطح پر مہنگائی کے دوران ہم نے پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں کم کیں، کسانوں کو پہلی دفعہ پورا معاوضہ ملا، ورلڈ بینک کے مطابق کورونا کے دوران سب سے زیادہ روزگار پاکستانیوں کو ملا، ہماری انڈسٹری بڑھ رہی تھی، جب معیشت 5 اعشاریہ 6 فیصد پر گروتھ تب میر جعفروں نے مل کر سازش کی، جب مجھے سازش کا پتا چلا تو ان کے پاس گیا جو سازش کو روک سکتے تھے، انہیں کہا اگر سازش کامیاب ہوئی تو ملک تباہی کی طرف جائے گا، شوکت ترین کو بھیجا ان کو بتاؤ جو اپنے آپ کو نیوٹرل کہتے ہیں، شوکت ترین نے بھی انہیں بتایا لیکن افسوس سازش کو نہیں روکا گیا، آج اسٹاک مارکیٹ نیچے اور ڈالر 200 پر جارہا ہے، آج میڈیا کے لوگ مہنگائی بارے عوام سے کیوں نہیں پوچھتے، جب ملک پاؤں پر کھڑا ہو رہا تھا تب انہوں نے سازش کے ذریعے ہماری حکومت گرائی۔

عمران خان نے کہا کہ مجھے پتا ہے کس، کس نے سازش کی ہے، ایک، ایک کا پتا ہے، چیف جسٹس کو صدر مملکت نے خط لکھا ہے، کمیشن بنائیں، اوپن کورٹ میں سماعت کرائیں تاکہ پوری قوم کو میر جعفر کا پتا چلے، بلاول کے سارے پیسوں کا امریکیوں کو پتا ہے کدھر، کدھر پڑے ہیں، یہ کبھی امریکا کے خلاف بات نہیں کرے گا، بلاول امریکیوں کو کہے گا پیسے دے دو ورنہ عمران واپس آجائے گا، امریکا اگر پیسے دے گا تو پھر اڈے مانگے گا، دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پہلے ہی بہت شہادتیں دے چکے ہیں، دہشت گردی کی جنگ میں ہمارے فوجی جوان شہید ہوئے، اگر امریکا پیسے دے گا تو پھر کسی اور کی جنگ میں شرکت کا کہیں گے، ہم نے کسی کی غلامی نہیں کرنی، بلاول میں جرات نہیں ہوگی کہ روس سے 30 فیصد پٹرول لینے کا کہے، ہماری حکومت روس سے 30 فیصد سستا تیل لینے کی بات کر رہی تھی، روس سے سستا تیل، گندم ملنے سے پاکستان کے عوام کو فائدہ ہونا تھا، اس حکومت کو وہ کرنا پڑے گا جو امریکا کہے گا، اس حکومت کو یوکرین جنگ میں روس کے خلاف بیان دینے کا کہا جائے گا، جب غلام اوپر بیٹھ جائیں تو پھر وہی کریں گے جو امریکا کہے گا۔